چلو اب ہم بچھڑتے ہیں ۔ ۔ ۔ ۔

چلو اب ہم بچھڑتے ہیں

سلگتی دھوپ میں غم کی
بھری آنکھوں کے ساون میں
کہو تم الوداع مجھکو
خدا حافظ کہوں میں بھی
چلو اب ہم بچھڑتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔
سفر یہ مختصر ہوگا،یہ ہمکو بھی خبر تھی
یہ تم بھی جانتی تھیں،بس کوئی دن کا سفر ہے یہ
کسی اک موڑ پر اک دن
بچھڑ جائینگے ہم یونہی
تمہاری راہ کی ضد پر،مرے رستے کھلیں گے
یہی وہ موڑ ہے جس پر
بچھڑنا ہے ہمیں ہنس کے
الگ رستے پہ چلنا ہے
الگ منزل کی جانب اب
چلو اب ہم بچھڑتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔
مگر جانے سے پہلے آخری درخواست ہے تم سے
سفر لمبا ہے مجھکودیدو”اپنی یاد کی پونجی”
“کھنکتے بول کے سکّے۔۔۔۔۔۔۔”
کہ کل جب خامُشی در پر صدا دے
تو دھر دوں اُس کے کاسے میں
کھنکتے بول کے سکّے
!! تمہارے بول کے سکّے
کوئی بھی اٹپٹا جملہ کہ جس میں ہو
کتاب زیست کی آیات کا جادو
تم اپنی پیاری انگلی سے ہماری پیٹھ پہ لکھ دو
کہ کل جب لفظ دب جائیں،کتابوں کی عمارت میں
یہی جملہ پڑھونگا میں
!!تمہارا اٹپٹا جملہ
جگا دو لمس کے جگنو،مرے سارے بدن پر تم
وہ جگنوجو کریں روشن،تمہاری یاد کو ہر دم
کہ پھر جب بھی اندھیرے سے گزر ہوگا
یہی جگنوتوچمکیں گے
!!تمہارے لمس کے جگنو
بٹھادو پیار کی تتلی،الگ قسموں کی رنگوں کی
مری ہر شاخ پہ چُن کے
کہ کل جب زندگی بےرنگ ہوگی تو
یہی تتلی میں دیکھونگا
!!تمہارے پیار کے تتلی
بہا دو آنکھ کا دریا،مرے کاندھے پہ سررکھ کے
وہ دریا جس میں ہو اپنے،بتائے سب کے سب ساون
کہ جب کل تشنگی میری یہ جسم وجاں جلائے گی
اسی دریا سے پیاس اپنی بجھاوَں گا
!!تمہاری آنکھ کا دریہ
تم اپنے خوش نما ناخن
چبھودو میرے سینے میں
جھپٹ کر اس قدر گہرے
“کہ رہتی زندگی تک اک بھلی سے ٹیس رہ جائے”
چلو اب ہم بچھڑتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔
مگر جانے سے پہلے آخری درخواست ہے تم سے
سفر لمبا ہے مجھکودیدو”اپنی یاد کی پونجی”
کھنکتے بول کے سکّے
کوئی بھی اٹپٹا جملہ
تم اپنے لمس کے جگنو
اور اپنے پیار کی تتلی
اور اپنی آنکھ کا دریا

!! وہی اک ٹیس لافانی

(زماں حبیب)

 

Man gets whatever he strives for; اَنْ لَّیْسَ لِلْاِنْسَانِ اِلاّٰ مَا سَعٰی

The beautiful verse of the holy Quran, Chapter 53 Surah Najm verse 39: ” Laisa lil insana illa ma sa’a” There is nothing for man except what he strives for.

 

This verse is the secret of the success of human kind. Without struggle and hard work no one can achieve success, believing on luck and sitting idle will not bring success,  Sir Aga Khan III said “Struggle is the meaning of life; defeat or victory is in the hands of God. But struggle itself is man’s duty and should be his joy. 

It does not mean to not believing in God, placing hope on divinity of god that will bring success is only possible when one strive for it. A person who strongly believer of luck, leaving everything on God with the hope that thing pan out for best is the opposite of natural laws, God help those who help themselves must be mankind philosophy in this world,

As Prophet Muhammad (P.B.U.H) said “The reward of deeds depends upon the intentions, and every person will get the reward according to what he has intended.”  With intention of hard work to achieve objective is the main crux achievements in life without moving from our placing and sit with this intention that if it’s in my luck I will get is the irrational perception,  One’s goal, objectives, mission, targets must be backed by his or her actions.  The well know saying “action speaks louder than words” it does not make any difference what you say. What matters is that what you do.  The people who always blaming their luck, without trying to improve their circumstances, such people never achieve anything in their life,such people who blaming that whatever happens to him/her is the result of luck or destiny, lose there will power and stamina and energy of work, this kind of beliefs lead human being in danger, the present scenario of our society is one of the reason of such dogmas,

 we mostly come across with a such people who blaming their luck and arguing  that I wanted to become a engineer and strove hard to achieve this goal but I failed and became a teacher or else so such kind of scenario are relate to luck or destiny , I think this is wrong perspective, if human being strive and not get success , it is impossible.. Mankind must not lose the true spirit of hard work and consistency of struggle, one can mould his destiny, by the true spirit of hard work that’s why it is rightly said man is the architect of his own destiny, History is full of examples who shaped their destiny in the right way, so remember “where there is will, there is way”

With a beautiful poetic expression of Allama Iqbal

کافر ہے تو ہے تابع تقدیر مسلمان

مومن ہے تو خود آپ ہے تقدیر الہٰی