جہاں بھر میں ہمارے عشق کی تشہیر ہوجائے

جہاں بھر میں ہمارے عشق کی تشہیر ہوجائے
اُسے کس نے کہا تھا دل پہ یوں تحریر ہو جائے

 

میں سچا ہوں تو پھر آئے مِری تقدیر ہوجائے
میں جھوٹا ہوں تو میرے جرم کی تعزیر ہوجائے

میں اپنے خواب سے کہتا ہوں آنکھوں سے نکل آئے
ذرا آگے بڑھے اور خواب سے تعبیر ہوجائے

زباں ایسی کہ ہر اک لفظ مرہم سالگے اُس کا
نظر ایسی کہ اُٹھتے ہی دلوں میں تِیر ہو جائے

وہ ہر پَل جس میں اپنے پیار کی یادیں دھڑکتی ہیں
مِری جاگیر ہو جائے، تجھے زنجیر ہو جائے

سبب کچھ تو رہا ہوگا ترے حیدر کی حالت کا
کبھی جو بے سبب ہنس دے، کبھی دلگیر ہوجائے

حیدر قریشی کی  مکمل شاعری

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s